گلگت، گرمی سے بے حال اور بجلی سے محروم روزہ دار افطار کے لیے برف خریدنے لگے

2 views
0
Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on LinkedInPin on PinterestShare on Google+
گلگت بازار میں گرمی کے مارے اور بجلی سے محروم روزہ داروں کی پیاس بجھانے کا انتظام عبدللہ خان اور اسی کی طرح کے دوسرے برف فروش کر رہے ہیں

گلگت بازار میں گرمی کے مارے اور بجلی سے محروم روزہ داروں کی پیاس بجھانے کا انتظام عبدللہ خان اور اسی کی طرح کے دوسرے برف فروش کر رہے ہیں

گلگت (مون شیرین ) ماہ صیام میں گلگت شہر میں برف کا کاروبار عروج پر ہے سینکٹروں افراد نے اسسے اپنے روزی کا ذریعہ بنایا ہے. ماہ صیام میں روزہ دار پیاس کی شدت کو کم کرنے کے لئے خاص کر افطارمیں یخ پانی استعمال زیادہ کرتے ہیں۔ تاکہ دن بھر کے پیاس کو بُجھا سکے۔ رمضان مبارک میں شدید گرمی کے باعث روزہ داروں کو زیادہ شدید پیاس لگتی ہے، جبکہ گلگت شہر مین غیر اعلانیہ لوڈشیدنگ کے باعث بھی عوام کو ٹھنڈا پانی میسر نہیں ہوتی ہے۔
گلگت کے معروف بازار گھڑی باغ میں برف فروخت کرنے والے شخص عبداللہ خان کا کہنا ہے کہ جب گرمی زیادہ ہوتی ہے تو برف کی طلب میں بھی اضافہ ہوتا ہے۔ اُن کا کہنا ہے کہ وہ ہر روز بابو سر سے مزدے میں قدرتی برف لاتا ہے۔ جس کی طلب زہادہ ہے۔ بابو سر سے گلگت تک کا سفر پانچ گھنٹے کا ہے گلگت پہنچتے پہنچتے بر ف کافی پگھل بھی جاتا ہے۔ اُن کا مزید کہنا ہے کہ وہ ایک شاپر میں برف50 روپے کافروخت کرتا ہے اور لوگ اس قدرتی برف کا شوق سے خریدتے ہیں۔
اس قدرتی برف کو شہر لانے سے ماحول پر کیا اثر انداز ہو رہا ہے۔ جبکہ دوسری طرف اس کاروبار سے کافی افراد اپنے گھر چلاتے ہیں۔
Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on LinkedInPin on PinterestShare on Google+

آپ کی رائے

comments

About author

پامیر ٹائمز

پامیر ٹائمز گلگت بلتستان، کوہستان اور چترال سمیت قرب وجوار کے پہاڑی علاقوں سے متعلق ایک معروف اور مختلف زبانوں میں شائع ہونے والی اولین ویب پورٹل ہے۔ پامیر ٹائمز نوجوانوں کی ایک غیر سیاسی، غیر منافع بخش اور آزاد کاوش ہے۔