چترال میں زلزلہ سے ہلاک شدہ گان کی تعداد 23 ہوگئی، سینکڑوں زخمی، مواصلات کا نظام درہم برہم

چترال میں زلزلہ سے ہلاک شدہ گان کی تعداد 23 ہوگئی، سینکڑوں زخمی، مواصلات کا نظام درہم برہم

3 views
0
Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on LinkedInPin on PinterestShare on Google+

چترال (بشیر حسین آزاد ) چترال میں پیر کے دوپہرشدید زلزلے سے آخری اطلاعات آنے تک 23 افراد مختلف علاقوں میں جان بحق ہوگئے ہیں جبکہ زخمیوں کی تعداد سینکڑوں میں بتایاجارہا ہے۔ جبکہ منہدم ہونے والے کچے مکانات کی تعداد بھی سینکڑوں میں رپورٹ ہوئی ہے۔

زلزلے کے فوراً بعد ضلعے کے مختلف علاقوں سے زخمیوں کو ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹرز ہسپتال پہنچانے کا سلسلہ جاری رہاجن میں تین افراد ابتدائی طبی امداد کے بعد زخموں کی تاب نہ لاکر جان بحق ہوگئے۔

چترال پولیس کے مطابق اب تک ہلاکتوں کی تعداد 23 ہوگئی جن میں سے چار کا تعلق چترال ٹاؤن اور مضافات سے، چار کا تعلق کوغذی گاؤں سے، پانچ کا تعلق دروش سے، لوٹ کوہ سے دو اور زئیت گاؤں سے دو اور،بونی دو،مستوج سے دو افراد شامل ہیں۔ ابھی تک مواصلات کا نظام درہم برہم ہونے کی وجہ سے ضلعے کے دوردراز علاقوں سے زلزلے کی تباہ کاریوں سے متعلق خبریں نہیں پہنچ سکی ہیں اس لئے مجموعی صورت حال ابھی تک سامنے نہیں آسکی جبکہ ہلاکتوں میں مزید اضافے کا خدشہ ظاہر کیا جارہا ہے۔

چترال کے ضلعی ہسپتال سے چار سے زائد زخمیوں کو تشویشناک حالت میں پشاور منتقل کردیا گیا ہے۔ 

زلزلے کے بعد شہر کے مختلف مارکیٹیں ویرانے کا منظر پیش کرنے لگے جبکہ اکثر لوگ اپنے اپنے گھروں کی خیروعافیت دریافت کرنے کے لئے شہرسے گاؤں کی طرف چلے گئے۔

چترال پولیس اور چترال سکاؤٹس کے جوان امدادی کاموں میں مصروف ہیں۔زلزلے بعد کمانڈنٹ چترال سکاوٹس کرنل نظام الدین شاہ ڈی ایچ کیو ہسپتال پہنچ گئے جبکہ چترال کے مقامی ممبران صوبائی اسمبلی سلیم خان اور بی بی فوزیہ بھی زخمیوں کی عیادت اور علاج معالجے کے انتظامات کا جائز ہ لینے کیلئے ہسپتال پہنچ گئے جبکہ ڈپٹی کمشنر چترال اسامہ احمد وڑائچ اور ڈی پی او چترال عباس مجید خان مروت انتظامات کی خود مسلسل نگرانی میں مصروف ہیں۔ چترال کے نوجوانوں کی بڑی تعداد زخمیوں کو خون دینے کے لئے ہسپتال میں جمع ہیں۔زلزلے سے چترال کے مضافاتی علاقوں کو جانے والی رابطہ سڑکیں بند ہو گئی ہیں جس کے باعث زخمیوں کو ہسپتالوں تک پہنچا نے میں مشکلات پیش آرہی ہیں۔

Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on LinkedInPin on PinterestShare on Google+

آپ کی رائے

comments

About author

پامیر ٹائمز

پامیر ٹائمز گلگت بلتستان، کوہستان اور چترال سمیت قرب وجوار کے پہاڑی علاقوں سے متعلق ایک معروف اور مختلف زبانوں میں شائع ہونے والی اولین ویب پورٹل ہے۔ پامیر ٹائمز نوجوانوں کی ایک غیر سیاسی، غیر منافع بخش اور آزاد کاوش ہے۔