چترال پولیس نے نومولود بچے کی اغوا کو ناکام بناتے ہوئے خاتون کو گرفتارکرلیا

چترال پولیس نے نومولود بچے کی اغوا کو ناکام بناتے ہوئے خاتون کو گرفتارکرلیا

3 views
0
Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on LinkedInPin on PinterestShare on Google+

چترال(نذیرحسین شاہ) چترال پولیس نے آدھ گھنٹے کے اندر اندر نومولود بچے کی اغوا کو ناکام بناتے ہوئے اغوا کار خاتون کو گرفتار کرکے بچے کو والدین کے حوالے کردئیے۔ منگل کے روز سب ڈویژنل پولیس افیسر چترال عبدالستار خان نے میڈیا کو بتایاکہ گزشتہ شام ڈی ایچ کیو ہسپتال کے ویمن اینڈ چلڈرن ونگ ژانگ بازار میں کاواش شیشی کوہ کی رہائشی حضرت الدین کی بیوی نے گائنی وارڈ میں ایک بچے کو جنم دی تھی جسے منگل کے روز ایژ گرم چشمہ کی رہائشی حمیدہ بی بی حال گولدور نے صبح صادق سے پہلے ماں کو سوتی ہوئی دیکھ کر چرالیا اور بہت ہی جلد آنکھیں کھلنے پر انہوں نے شوہر کو بتادی۔ جس نے پولیس کو رپورٹ کردی جس پر چترال تھانے کے ایس ایچ او ناصر علی نے فوری کاروائی شروع کردی اور آدھ گھنٹے کے اندر بچے کا سراغ لگانے میں کامیاب ہوگئے اور انتہائی پریشانی میں مبتلا والدین کو ان کا بیٹا مل گیا۔

انہوں نے بتایاکہ حمیدہ بی بی نے بچے کو ریحان کوٹ میں رہائش پذیر اپنی بیٹی سدرہ کے پاس رکھا ہوا تھا جس پر پولیس نے ماں بیٹی دونوں کو گرفتار کرکے ان کے خلاف تحزیرات پاکستان کے دفعات 363اور 334اے کے تحت مقدمہ درج کرلیا ہے۔ اس موقع پر ملزمہ حمیدہ بی بی نے میڈیا کو بتایاکہ ان کی سات بیٹیاں تھیں اور بیٹے کا آرزو دل میں لئے پھرتی تھی جبکہ دو سال قبل ان کے شوہر کا انتقال ہونے پر ان کی امیدیں ختم ہوگئی جس پر انہوں نے موقع پاکر اس بچے کو اٹھانے کا فیصلہ کیا۔
ان کے شوہر شیر افضل کا تعلق تھانہ ملاکنڈ ایجنسی سے تھا جوکہ چترال میں حجام کا کام کرتا تھا۔ اس موقع پر بچے کا باپ حضرت الدین نے بچے کی فوری بازیابی پر ڈی پی او چترال سید علی اکبر شاہ ، ایس ڈی پی او عبدالستار اور ایس ایچ او ناصر علی کا شکریہ ادا کیا۔

Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on LinkedInPin on PinterestShare on Google+

آپ کی رائے

comments

About author

پامیر ٹائمز

پامیر ٹائمز گلگت بلتستان، کوہستان اور چترال سمیت قرب وجوار کے پہاڑی علاقوں سے متعلق ایک معروف اور مختلف زبانوں میں شائع ہونے والی اولین ویب پورٹل ہے۔ پامیر ٹائمز نوجوانوں کی ایک غیر سیاسی، غیر منافع بخش اور آزاد کاوش ہے۔