چترال پریس کلب میں تحفظ انسانی حقوق اور مہاجرین کے عنوان پر ایک روزہ ورکشاپ کا انعقاد

چترال پریس کلب میں تحفظ انسانی حقوق اور مہاجرین کے عنوان پر ایک روزہ ورکشاپ کا انعقاد

10 views
0
Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on LinkedInPin on PinterestShare on Google+

چترال ( نذیرحسین شاہ نذیر) سوسائٹی فار ہیومن رائٹس اینڈ پریزنر ایڈ  (SHARP) اور آئی سی ایم سی کے اشتراک سے تحفظ انسانی حقوق اور مہاجرین کے حقوق پر ایک روزہ ورکشاپ چترال پریس کلب میں منعقد ہوا جس میں چترال پریس کلب اور ریڈیو سے وابستہ صحافیوں نے شرکت کی ۔ صدر پریس کلب چترال ظہیر الدین مہمان خصوصی تھے ۔ اس موقع پر خطاب کرتی ہوئے ڈائریکٹر شارپ میمونہ بتول خان نے کہا کہ گذشتہ چالیس سالوں سے پاکستان میں مہاجرین قیام پذیر ہیں لیکن تاحال مہاجرین کے حوالے سے کوئی قانون سازی نہیں کی گئی ہے ۔ صرف ایڈ ہاک بنیادوں پر اُن سے ڈیل کیا جا رہا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ افغان مہاجرین کو ابتدائی طور پر کیمپوں تک محدود کر دیا گیا تھا لیکن 1997ء سے جب مہاجرین کو روزگار کیلئے کیمپوں سے باہر جانے کی اجازت دی گئی، اُس کے بعد مختلف مسائل نے جنم لیا ۔میمونہ بتول نے کہا کہ اگر چہ افغان مہاجرین کی واپسی کے سلسلے میں عوامی سطح پر بات اُٹھ رہی ہے لیکن مہاجرین کی واپسی میں اُن کے اپنے علاقوں میں کئی مشکلات درپیش ہیں جن کو حل کرنے کی اشد ضرورت ہے اور یہ مسائل حل کئے بغیر اُن کو جبراً واپس نہیں بھیجا جا سکتا جو بین الاقوامی اُصولوں کے خلاف ہے ، اور ایسے اقدامات سے پاکستان کی ساکھ کو نقصان پہنچ سکتا ہے ۔

اس موقع پر قاضی سجاد احمد نے چترال میں شارپ آفس کے قیام اور اُس کے کام کرنے کے طریقہ کار سے متعلق شرکاء کو آگاہ کیا ۔ جبکہ منصور خان نے انسانی حقوق کے بنیادی تصور ، انسانی حقوق اور آئین پاکستان ، بین الاقوامی قوانین اور پاکستان میں اُن پر عملدر آمد ، حقوق و فرائض اور ریاست و اُس کے اداروں کی ذمہ داریوں پر تفصیل سے روشنی ڈالی ۔ انہوں نے کہا ، کہ مہاجرین کو کسی ملک میں داخلے سے روکنا بین الاقوامی قانون کی کھلی خلاف ورزی ہے ۔ غیاث گیلانی ایڈوکیٹ نے پاکستان میں مہاجرین کی انٹر نیشنل قوانین کے تحت حقوق کے تحفظ ، مہاجرین کے حقوق ،موجودہ حالات میں مہاجرین کیلئے کئے جانے والے اقدامات ، مہاجرین کارڈ وغیرہ کے بارے میں پیچیدگیوں کے حل اور قانونی معاملات پر عملدر آمد کے حوالے سے اپنے خیالات کا اظہار کیا ۔ ورکشاپ سے ارما فرنسس اور عمران دستگیر نے بھی خطاب کیا ۔

ورکشاپ کے دوران سوال و جواب کے سیشن میں کئی مسائل زیر بحث آئے ۔ مہمان خصوصی ظہیر الدین نے اس موقع پر شرکاء میں شرکت کے اسناد تقسیم کی جبکہ شارپ اور آئی سی ایم سی کی جانب سے چترال پریس کلب کو شیلڈ بھی پیش کی گئی۔

Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on LinkedInPin on PinterestShare on Google+

آپ کی رائے

comments

About author

پامیر ٹائمز

پامیر ٹائمز گلگت بلتستان، کوہستان اور چترال سمیت قرب وجوار کے پہاڑی علاقوں سے متعلق ایک معروف اور مختلف زبانوں میں شائع ہونے والی اولین ویب پورٹل ہے۔ پامیر ٹائمز نوجوانوں کی ایک غیر سیاسی، غیر منافع بخش اور آزاد کاوش ہے۔