اکتوبر میں بلدیاتی انتخابات اکتوبر میں‌کروانے کے امکانات

غذر(دردانہ شیر)  صوبائی حکومت نے گلگت بلتستان میں بلدیاتی ا لیکشن اس سال اکتوبرمیں کرانے پر غور شروع کر دیا ڈسٹرکٹ ممبران کی تعداد بڑھانے کا بھی فیصلہ گلگت بلتستان میں ضلعوں کی تعداد دس ہونے کے بناپر الیکشن سے قبل گلگت بلتستان کے ممبران ڈسٹرکٹ کونسل اور بلدیہ کے ممبران کی تعداد میں بھی اضافے پر بھی غور شروع ہوگیا ہے ذرائع کے مطابق گلگت بلتستان میں 2010سے بلدیاتی الیکشن نہ ہونے کی وجہ علاقے میں بلدیاتی اداروں کی طرف سے تعمیر ہونے والے منصوبے بھی سست رفتاری کا شکار ہیں اور اس مد میں ملنے والی رقم کے خرچ ہونے کا بھی کوئی پتہ نہیں چلتا جس وقت ڈسٹرکٹ کونسل اور بلدیاتی ممبران تھے اس وقت ڈسٹرکٹ کونسل اور بلدیاتی ممبران کو ان کے حلقوں کے ترقیاتی منصوبوں کے لئے لاکھوں روپے ملتے تھے جو مزکورہ ممبراپنے علاقے میں رابطہ سڑکیں نالیاں بنانے پر خر چ کرتا تھا جب سے بلدیاتی الیکشن نہیں ہوئے ہیں خطے میں اس طرح کے کوئی ترقیاتی کام نظر نہیں آتے بلدیاتی الیکشن اکتوبرمیں ہونے کے امکانات پر ابھی سے ہی سیاسی افراد نے اندون خانہ اپنی انتخابی سرگرمیوں کا سلسلہ شروع کر دیا ہے ہے اور مختلف سیاسی جماعتوں کے عہدیدران ابھی سے ہی الیکشن کی تیاری میں لگے نظر آتے ہیں اور ایسے امیدواروں کی بڑی تعداد بھی منظر پر اگئی ہے جنھوں نے صوبائی الیکشن میں بری طرح شکست کھانے کے بعد اب ڈسٹرکٹ کونسل کے انتخابات میں اپنی قسمت ازمائی کا فیصلہ کیا ہے اگر اکتوبر2018 میں بلدیاتی الیکشن ہوگئے تو مسلم لیگ (ن) پی پی اور تحریک انصاف کے درمیان مقابلہ ہونے کا امکان ہے اور کئی موسمی پرندوں نے پارٹیاں بدلنے کے لئے ابھی سے ہی تیاریاں شروع کیا ہوا ہے اور اس حوالے سے اندرون خانہ اب سے ہی مختلف پارٹیوں کی اعلی عہدیدران سے رابطے شروع کر دیئے ہیں۔اگر بلدیاتی الیکشن ہوگئے تو بلدیاتی امیدواروں کو ملنے والے فنڈز سے عوام کے چھوٹے موٹے مسائل بروقت حل ہونگے اور حکومت کی کارکردگی میں بھی بہتری ائیگی

Print Friendly, PDF & Email

آپ کی رائے

comments