اے کربلا کی خاک!!

اے کربلا کی خاک!!

134 views
0
Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on LinkedInPin on PinterestShare on Google+

شاہ است حسین پادشاہ است حسین
دین است حسین دین پناہ است حسین
سر داد نداد دست در دست یزید
حقا کہ بنائے لا الہ است حسین

ظہورِ آدم سے لے کر آج تک انقلابات نے کیا کیا رنگ دکھائے………… دن بھی آئے………… راتیں بھی آئیں………… خوشی بھی آئی اور غم بھی آیا………… خزاں بھی اور بہار بھی………… گل بھی اور خار بھی………… مسرت بھی اور مضرت بھی………… نہ جانے کتنے طوفان اُٹھے…………؟ کتنی کشتیاں منجدھار کا شکار ہوئیں اور کتنی ہمکنارِ ساحل………… کتنے ساتھی بچھڑے اور کتنے ہم آغوش ہوئے………… نہ جانے منزل پر پہنچنے والے کتنے تھے اور راہ گم کردہ کتنے…………؟ نیرنگی فطرت نے کیا کچھ کیا، کیا کیا ہوا اور کیا کیا نہ ہوا…………؟ مگر آج تک اس گردشِ شام و سحر کے بیچ جتنے طوفان اُٹھے………… جتنے بھی گھر اُجڑے………… کسی بھی حادثے پر اس شان سے اہتمامِ آہ و فغاں نہ ہوا………… کہ آج بھی محرم کا سوز اور تب و تاب فضا کو سوگوار بنا دیتا ہے اور عالمِ اضطراب دِلوں میں ہل چل مچا دیتا ہے۔ محرم کے پہلے عشرہ میں سِسکیوں کی دلدوز چیخیں………… گوشِ فلک کو سنائی دیتی ہیں اور ان کی صدائے بازِگشت سے گنبد جہاں گونج اُٹھتا ہے ؂

غریب و سادہ و رنگیں ہے داستانِ حرم

نہایت اس کی حسین، اِبتدا ہے اسماعیل

حق و باطل، شیطانی روحانی اور طاغوتی و لاہوتی قوتیں اِبتدائے آفرینش سے آپس میں ٹکراتی رہی ہیں۔ حضرت ابراہیم خلیل اللہ نے نمرود کے خود ساختہ پیر الوہیت کو تار تار کیا………… اور کبھی حضرت موسیٰ کلیم اللہ نے فرعون کو غرقاب نیل کر دیا………… جب خلافت عظمیٰ بھی یزید کا تختۂ مشق بن چکی تھی۔ آئین اسلام کی جگہ طوائف الملوکی اور آمریت خیمہ زن تھی۔ جوشِ جہاد کی جگہ کمزوری اور ناتوانی لے چکی تھی………… ظلم و استبداد کے سامنے خوشامدانہ خاموشی، باطل قوتوں کے آگے مصلحت اور اربابِ اختیار کے حضور میں قومی غیرت اور ملّی حمیت سجدہ ریز تھی………… اس وقت خونخوار بھیڑیا صفت یزید کے سامنے کلمۂ حق کہنے والے وہی تھے جن کی رگوں میں ہاشمی خون دوڑ رہا تھا ؂

ستیزہ کار رہا ہے ازل سے تا اِمروز

چراغ مصطفوی سے شرار بولہبیست

اس وقت وہ حسینؑ سپہ سالارِ اسلام تھے………… جو نواسۂ مصطفیؐ ہے………… جو جگر گوشۂ شیر خدا ہے………. جو نورِ عین زہراؑ ہے……….. جو برادرِ حسن مجتبیٰؑ ہے………… جو راکبِ دوشِ حبیبِ کبریاؐ ہے………… جو برادرِ عباسِ باوفا ہے………… جو پیکرِ رشد و ہدیٰ ہے……….. جو مجسمۂ فقرو استغنا ہے………… جو کشتۂ خنجر تسلیم و رضا ہے………… جو شہید کربلا ہے………… اور جس کا خون اِسلام کی بقا ہے ؂

قتل حسین اصل میں مرگِ یزید ہے

اِسلام زندہ ہوتا ہے ہر کربلا کے بعد

امام عالی مقام علیہ السَّلام نے اپنے چند مخلص جانثاروں کی معیت میں باطل قوتوں کو خس و خاشاک بنا دیا اور کبرو نخوت سے اکڑی گردنیں خم ہوگئیں۔

میری چشم تصور وہ کربناک منظر دیکھ رہی ہے کہ تپتا ہوا صحرا ہے………… گلشن رسالتؐ کی کلیاں مرجھا رہی ہیں………… علی اصغر تشنہ لب ہے………… پانی پانی کی صدا بلند ہو رہی ہے………… ہاشمی خیموں میں بے کسی ہی بے کسی ہے………… عابد کی بیماری ہے………… زینب ؑ کی بے قراری ہے………… سورج نصف النہار سے کب کا ڈھل چکا مگر شبیر ؑ پر مسلسل ژالہ باری ہے………… امام عالی مقام علیہ السَّلام کا سینہ زخموں سے چور چور ہے………… لیکن پھر بھی رسم نماز جاری ہے۔ اے شبیر ؑ ! تلواروں کے سائے میں نماز ادا کرنا تیرا ہی کام تھا۔ تو نے وہ سجدہ کیا کہ ازل تا امروز ساکنانِ عرش و فرش کے لیے باعثِ رشک بن گیا………… تو حاصلِ نماز ہے اور نماز کا ناز بھی…………!!

قارئین! ذرا چشم تصور سے دیکھئے اس عظیم کارواں کی شام غریباں………… خیموں سے دُھواں اُٹھ رہا ہے………… اہل بیت علیہما السَّلام کے لاشے گھوڑوں کے سموں سے کچلے جا رہے ہیں………… کسی کا ہاتھ لاشے سے جُدا ہے اور کسی کا سر تن سے جُدا………… یہ لاش اس جوان کی ہے جو حیدرِ کرار ؑ کے دِل کا چین………… اور سیدہ بتول کا نورِ عین ہے………… ریگزار کربلا کے ذرّے ذرّے نے اس جانگسل منظر کو اپنی آنکھوں سے دیکھا………… چرخِ کج رفتار نے آنسو بہائے………… بے رحم بادل کی ہچکیاں بندھ گئیں………… چشم کوہ سے نالے پھوٹے………… ہوائیں اشک بہانے لگیں………… فضائیں بُلبُلانے لگیں………… دریاؤں کی روانی تھم گئی………… پھولوں سے خوشبو اُڑ گئی………… ستاروں میں روشنی نہ رہی………… قوس و قزح سے رنگینی چھن گئی………… چاند نے سیاہ قبا پہنی………… طائرانِ گلشن نے اہتمامِ آہ و زاری کیا………… عندلیبانِ چمن نے اِنتظامِ عزا داری کیا…………!!

جنات انگشت بہ دندان………… انسان حیران و پشیماں………… خورشید نوحہ کناں………… حجر و شجر ہراساں………… بہاریں چاکِ گریباں………… فرشتے رنجیدہ رنجیدہ………… اور حوریں سنجیدہ سنجیدہ………… گویا نظام فطرت میں زلزلہ آگیا………… آج بھی کائناتِ رنگ و بو کا ذرّہ ذرّہ زبانِ حال میں رطب اللسان ہے ؂

اے کربلا کی خاک! تو اس احسان کو نہ بھول

تڑپی ہے تجھ پہ لاش جگر گوشۂ بتولؑ

مظلوم کے لہو سے تیری پیاس بجھ گئی

سیراب کر گیا تجھے خونِ رگِ رسولؐ

…………………………………………………

کلیاتِ کریمی کی جلد دوم ’’سسکیاں‘‘ سے ماخوذ عقیدت میں ڈوبی ہوئی ایک کاٹ دار تحریر۔

Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on LinkedInPin on PinterestShare on Google+

آپ کی رائے

comments