گھانچھے سے تعلق رکھنے والی خاتون نیویارک امریکہ میں شوہر کے ہاتھوں بیدردی سے قتل

رپورٹ: محمد حسین از نیویارک

نیویارک کے علاقے فریش میڈو میں پندرہ جنوری کو اپنے ظالم شوہر جواد حسین (لاہور سے تعلق رکھنے والے) کے ہاتھوں انتہائی بے دردی سے قتل ہونے والی فاطمہ جواد بنت شجاعت حسین کی رسم سوم کی قرآن خوانی و مجلس آج امام الخوئی اسلامک سنٹر جمیکا میں منعقد ہوئی جس میں کثیر تعداد میں لوگوں نے شرکت کی۔

ظالم شوہر نے اپنی بیوی کو چھریوں کے وار سے قتل کیا، جب کہ ماں کو بچانے کے لیے روکنے کی کوشش کرنے پر اپنی اٹھارہ سالہ بیٹی پر چھریوں سے وار کیا۔ بیٹی نے فورا پولیس کو اطلاع دی۔ نیویارک پولیس نے فورا پہنچ کر جواد حسین کو موقع پر گرفتار کر دیا اور زخمی بیٹی کو ہسپتال منتقل کر دیا جو اب خطرے سے باہر ہے۔

قتل کی تحقیقات پولیس کر رہی ہے ابھی تک کوئی وجہ سامنے نہیں آئی۔

چھتالیس سالہ مرحومہ فاطمہ کا تعلق گلگت بلتستان کے ضلع گنگچھے سے تھا اور جواد حسین کے ساتھ شادی کے بعد بیس سال سے نیویارک میں رہائش پذیر تھی۔ جواد کے ساتھ ایک بیٹا (بیس سال) اور اٹھارہ، سولہ اور گیارہ سال عمر کی تین بیٹیاں ہیں۔

واضح رہے مرحومہ کی امام الخوئی اسلامک سنٹر میں تجہیز و تکفین اور نماز جنازہ کے بعد سولہ جنوری کو لانگ آئی لینڈ کی قبرستان ماونٹ سینا میں دفن کر دیا گیا ہے۔

ہر آنکھ اشک بار کردینی والی پردیس کی اس مظلومانہ حادثاتی موت نے پوری کمیونٹی کو لرزہ خیز کر دیا ہے۔

ایصال ثواب کی مجلس سے خطاب کرتے ہوئے مولانا ناصر حسین نے بے آسرا بچوں کی تعلیم و کفالت کی ذمہ داری اٹھانے کے لیے کمیونٹی کو بڑھ چڑھ کر حصہ لینے کی تاکید کی۔

تجہیز و تکفین اور بچوں کی کفالت و تعلیم کے لیے لوگوں نے عطیات جمع کرنے کا سلسلہ شروع کر دیا جبکہ مقامی میڈیا نے بھی حادثے کی شکار فیملی کے سپورٹ کے لیے چندہ مہم کی تشہیر کی ہے۔

Print Friendly, PDF & Email

آپ کی رائے

comments