کام چورملازمین کے خلاف کاروائی کا آغاز کر دیا

کام چورملازمین کے خلاف کاروائی کا آغاز کر دیا

11 views
0
Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on LinkedInPin on PinterestShare on Google+

گلگت( پ ر) صوبائی وزیر تعمیرات نے اپنے محکمےمیں کام چورملازمین کے خلاف کاروائی کا آغاز کر دیا ہے۔ صوبائی وزیر تعمیرات نے محکمہ واسا اور بی اینڈ آر میں اچانک چھاپے لگائے۔ دفتروں میں ملازمین کی غیر حاضری کا نوٹس لیا۔

جمعرات کے روز صوبائی وزیر تعمیرات نے بی اینڈ آر اور واسا کے دفتروں پر چھاپے مارے اور ملازمین کی غیر حاضر ی پر سخت برہم ہوئے۔ صوبائی وزیر تعمیرات نے آفس میں چائے اور سیگریٹ نوشی پر 4ملازمین کے خلاف قانون کے مطابق کاروائی کا حکم دیااور ملازمین کا باقاعدہ حاضری لیا۔

صوبائی وزیر نے محکمے کے دفتروں میں صفائی کا بھی نوٹس لیا۔ اس موقع پر صوبائی وزیر تعمیرات نے ملازمین سے کہا کہ سائلین اپنے کام لے کر امید کے ساتھ دفتروں میں آتے ہیں لیکن دفتروں میں ملازمین کی غیر حاضری کے باعث سائیلین ناکام واپس لوٹتے ہیں۔ اُنہوں نے کہاکہ چند کام چور ملازمین کی وجہ سے پورا محکمہ بدنام ہو رہا ہے۔ان کام چور ملازمین کے خلاف کاروائی کر نا ضروری ہے۔

اُنہوں نے کہا کہ محکمہ تعمیرات گلگت بلتستان کی تعمیر وترقی میں سب سے بڑا محکمہ ہے۔ لوگوں کی ترقی اس محکمہ سے وابستہ ہے۔ بعض ملازمین صرف تنخواہ لینے کے لیے جون کے ماہ میں حاضر ہو تے ہیں اور پورا سال غائب ہو تے ہیں۔ ملازمین کے چائے اور سیگریٹ پر پابندی نہیں ہے بعض ملازمین دفتروں میں صرف چائے اور سیگریٹ نوشی کرتے ہیں اور سائلین کے کام پر توجہ نہیں دیتے ہیں اگر کسی ملازمین کو دفتر کے اندر سیگریٹ نوشی اور چائے پیتے پایا تو اُس کے خلاف ہر صورت میں کاروائی کی جائے گی۔ ملازمین کو اگر چائے اور سیگریٹ نوشی کرنا ہے تو دفتر سے باہر اپنا شوق پورا کرے۔

اُنہوں نے کہا کہ جن ملازمین کی ٹرانسفر ہوا ہے لیکن وہ اپنے متعلقہ اسٹیشن پر حاضر نہیں ہوا ہے اُن کے خلاف بھی کاروائی عمل میں لائی جائے گی۔ صوبائی وزیر تعمیرات نے ملازمین کو انتباہ کرتے ہوئے کہا کہ وہ اپنا قبلہ درست کرے بصورت دیگر ان کے خلاف کاروائی کی جائے گی۔

Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on LinkedInPin on PinterestShare on Google+

آپ کی رائے

comments

About author

پامیر ٹائمز

پامیر ٹائمز گلگت بلتستان، کوہستان اور چترال سمیت قرب وجوار کے پہاڑی علاقوں سے متعلق ایک معروف اور مختلف زبانوں میں شائع ہونے والی اولین ویب پورٹل ہے۔ پامیر ٹائمز نوجوانوں کی ایک غیر سیاسی، غیر منافع بخش اور آزاد کاوش ہے۔