انجمن ترقی کھوار حلقہ تریچ کے شعراء کا مجموعہ کلام’’ شینجور اسپرو ‘‘ شائع، تقریب رونمائی جلد ہوگی

انجمن ترقی کھوار حلقہ تریچ کے شعراء کا مجموعہ کلام’’ شینجور اسپرو ‘‘ شائع، تقریب رونمائی جلد ہوگی

16 views
0
Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on LinkedInPin on PinterestShare on Google+

 لاہور (نیوز ڈیسک)انجمن ترقی کھوار حلقہ تریچ کے شعراء کا مجموعہ کلام’’ شینجور اسپرو ‘‘ شائع ہو چکا ہے ۔کتاب انتہائی دیدہ زیب ٹائیٹل اور عمدہ کاغذ میں شائع کیا گیا ہے ،اس کتاب میں چترال کے علاقہ تریچ کے کم و بیش 80 شعراء کے کلاموں کو شامل کیا گیا ہے 128 صفحات پر مشتمل یہ شاندار مجموعہ ’’ ادارہ نوائے چترال ‘‘ کے تعاون سے چھپ کر منظر عام پر آ گیا ہے۔ اس خوبصورت مجموعہ کے بارے میں چترال کے مشہور و معروف شاعرو ں ادیبوں نے اپنے اپنے خیالات کا اظہار کیا ہے جن میں مولانگاہ نگاہ ،شہزادہ تنویر الملک تنویر مرکزی صدر انجمن ترقی کھوار چترال ،خواجہ سعید احمد سعیدصدر انجمن ترقی کھوار حلقہ پشاور،شرف الدین شریف ؔ صدر انجمن ترقی کھوار حلقہ تریچ ،حافظ نصیر اللہ منصور پریذیڈنٹ نوائے چترال گروپ آف میڈیا لاہور ،طارق اللہ طارق جنرل سیکریٹری انجمن ترقی کھوار حلقہ تریچ اور دیگر اہل قلم شامل ہیں

چند کلام نمونے کے طور پر پیش خدمت ہیں۔

تہ یاد بیتی ہاردیہ پیوست تہ روخچیک کجا

دُنیو ژینگیو نو پاشینی تہ رو خچیرو غیچ (عبد ا لو لی شاہ ولیؔ )

تان ووشکی گا نار خا لقو تے بس ہیہ دُعا

ہر دیو کیا وت تہ اَ فسار کہ خالی اریر (الطا ف حسین و صیلؔ )

اوشونی ہر لوُ مہ ژانہ سورا نو نیسی

عشقو ای راز دانو ہسے ہوش نو اریروا (ظفر اللہ وفاؔ )

اوا تہ شار دیرو تیز تر پھتو کار

پھتو کا بارو غو نہ یوُ چھوریتام (منور الزمان ظریفؔ )

ہسے مکین ہر دیو ہتو غو دور مہ ہردی

کار دو وفا متے اوا روخچیکو نو بوم (اکرام اللہ اکرامؔ ) 

ساعت ساعتہ غیچی گو نیان تہ ہر ادا مہ

مو غا ر اچی غیچ برووان کھوشتیسانہ کھو شتاوے (محمد ظفر صہبائیؔ )

کا غم نو ژانی اے مہ خالق یہ گلشنار بیر

کا درد ا مڑاغ یہ جہانہ چھوم ہو ساؤ اَسور (ساجد اللہ سائرؔ )

مو راوے ہر دیو کو س چھینی بغا ئے

ٹَک دوئے می نسان ہسے اچی گوئے (نثار احمد نا سقؔ )

نیزی پھریتا م ہر دیو تتے اے مہ مہ جبین

امیرؔ و سوم خور کیا غ شیر ژانئے تتے دیکو بش (امیر الدین امیرؔ )

نو مشکیم وا نو مشکیم نکی خور آرزونکی

مہ جنت بس تو مہ حور قست لہ تتے مہ ریما (اظہر اللہ اویزؔ )

بیٹی گلسمبر کوری غم نیسے کیا نی بو یان

ای گمبوری ہوستہ ہو کیا وت نو یاک نواو شو ئے (عتیق الرحمن محورؔ )

ہزار سال و ا عمر خدائے تتے دیار

پوئی تہ کوسار زندگیو چُھو ئے انوس (اسد اللہ اسدؔ )

تو مہ آرزوان جاگیر تو مہ قسمتو لکیر

مہ تصور و نصیب مہ عا شقی تہ ہے غیچ (عمران العجم عمرانؔ ) 

نہ سیم و زر مہ حاجت نہ کوم تاج و تختو طلب 

یہ کھل دُنیا دی مہ بس تہ سوم ہم نشین بیروا (جاوید احمد کاظمؔ )

Share on FacebookTweet about this on TwitterShare on LinkedInPin on PinterestShare on Google+

آپ کی رائے

comments

About author

پامیر ٹائمز

پامیر ٹائمز گلگت بلتستان، کوہستان اور چترال سمیت قرب وجوار کے پہاڑی علاقوں سے متعلق ایک معروف اور مختلف زبانوں میں شائع ہونے والی اولین ویب پورٹل ہے۔ پامیر ٹائمز نوجوانوں کی ایک غیر سیاسی، غیر منافع بخش اور آزاد کاوش ہے۔